Nazim's poetry

Nazim's poetry

Tuesday, February 9, 2016

Tere Bagair

بےکیف ہیں یہ ساغر و مینا ترے بغیر
آساں ہوا ہے زہر کا پینا ترے بغیر

کیا کیا ترے فراق میں کی ہیں مشقّتیں
اِک ہو گیا ہے خُون پسینہ ترے بغیر

جچتا نہیں ہے کوئی نِگاہوں میں آج کل
بےعکس ہے یہ دیدہء بینا ترے بغیر

کِن کِن بلندیوں کی تمنا تھی عشق میں
طے ہو سکا نہ ایک بھی زِینہ ترے بغیر

تُو آشنائے شدتِ غم ہو تو کچھ کہوں
کِتنا بڑا عذاب ہے جینا ترے بغیر

ساحل پہ کتنے دیدہ و دل فرشِ راہ تھے
اُترا نہ پار دل کا سفینہ ترے بغیر

باقی کسی بھی چیز کا دل پر اثر نہیں
پتھر کا ہو گیا ہے یہ سینہ ترے بغیر

No comments:

Post a Comment

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...