Nazim's poetry

Nazim's poetry

Sunday, July 26, 2015

Friday, July 24, 2015

Tanhaa Tum Hi Tu Nehi

Dilke Sannaton Mein Rehne Wale Tanha Tum Hi Nahi, 
Tanhayi Se Baatein Karne Wale Tanha Tum Hi Nahi, 

Is Ishq Ne Barbaad Kiya Hai Har Shakhs Ko, 
Is Ishq Mein Bikharne Wale Tanha Tum Hi Nahi, 

Kehne Ko To Faqt Ek Dil Hi Toota Hai, 
Apna Sab Kuch Lutane Wale Tanha Tum Hi Nahi, 

Hanste Hue Chehre Hai Yahan Sabke, 
Dard Yun Chhupane Wale Tanha Tum Hi Nahi, 

Shab-E-Tanhayi Ki Dastan Ek Si Hai Sabki, 
Andheron Mein Rehne Wale Tanha Tum Hi Nahi, 

Aisa Lagta Hai Ek Saza Ho Zindagi Meri, 
Is Qaid Mein Rehne Wale Tanha Tum Hi Nahi, 

Is Sheher Mein Aur Bhi Deewane Hai Sahil, 
Dar Dar Bhatakne Wale Tanha Tum Hi Nahi...


Wednesday, July 22, 2015

Tum Hi Tum Ho Mujh Mein

Wo Mujhe Pochta Hi Ni 
Main Kya Hon
Jab K Main Ni Hon 
Tum Hi Tum Ho Mujh Mein
(Nazim Ali)


Tu Jo Mila...

Aashiyaana mera 
saath tere hai na
Dhoondhte teri gali 
mujhko ghar mila
Aab-o-daana mera 
haath tere hai na
Dhoondte tera Khuda 
mujhko Rab mila
Tu ko mila lo ho gaya main qaabil
Tu jo mila to ho gaya sab haasil
Mushqil sahi aasaan hui manzil
Kyunki 
Tu.. Dhadkan.. 
Main Dil

Rooth jaana tera
Maan jaana mera
Dhoondhte teri hansi
Mil gayi meri khushi
Raah hoon main teri
Tu hai tu meri
Dhoondhte tere nishaan
Mill gayi khudi
Tu jo mila lo ho gaya main qaabil
Tu jo mila to ho gaya sab haasil haan
Mushqil sahi aasaan hui manzil
Kyunki 
Tu.. Dhadkan.. 
Main Dil
O...

Tu jo mila lo ho gaya main qaabil
Tu jo mila to ho gaya sab haasil.. haan!
Tu jo mila aasaan hui mushqil
Kyunki 
Tu Dhadkan.. 
Main Dil






Monday, July 20, 2015

Aj Bohttt Dino Ke Baad

آج بہت دنوں بعد سنی ہے بارش کی آواز
آج بہت دنوں بعد کسی منظر نئے رستہ روکا ہے
رم جھم کا ملبوس پہن کر یاد کسی کی آئی ہے
آج بہت دنوں باد اچانک آنکھ یوں ہی بھر آئی ہے
آنکھ اور منظر کی وسعت میں چاروں جانب بارش ہے
اور بارش میں دور کہیں ایک گھر ہے جس کی
ایک ایک اینٹ پر تیرے میرے خواب لکھے ہیں
اور اس گھر کو جانے والی کچھ گلیاں ہیں
جس میں ہم دونوں کے سائے تنہا تنہا بھیگ رہے ہیں
دروازے پر قفل پڑا ہے اور دریچے سونے ہیں
دیواروں پے جمی ہوئی خاک کی طرح چپ کر
موسم ہم کو دیکھ رہے ہیں
کتنے بادل ہم دونوں کی آنکھ سے اوجھل
برس برس کر گزر چکے ہیں
ایک کمی سی ایک نمی سی
چاروں جانب پھیل رہی ہے
کئی زمانے ایک ہی پل میں
باہم مل کر بھیگ رہے ہیں
اندر یادیں سُوکھ رہی ہیں
باہر منظر بھیگ رہے ہیں . . . !

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...